شرارت ہے

0
57
شرارت ہے

یہ تیری نظر کیا شرارت ہے
جیسے ہرے پتو کی عمارت ہے۔

بے رکُھی ارد گرد دایرے میں
تیری یاد میں کیسی قرارت ہے

ہے فقت دلِ ناداں کی معصوم جزبات
کیوں تیرے لہو میں یہ حرارت ہے؟

ہر سو شدت مجھے کھینچ کر صنم
کیوں تیری نگاہ میں یوں مہارت ہے؟

مدہوش میرے احساس انگنت ہے بے سبب
تیری یاد میں اک الگ ہی شرارت ہے

Editor's Note

The Kashmir Pulse is now on Google News. Get latest news updates by subscribing to our Telegram handle or join our WhatsApp Group!

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here